93

کورونا وائرس : ہزارہ میں رمضان المبارک کے حوالے سے حفاظتی پلان مرتب

زارہ ڈویژن میں کورونا کی تیسری لہر میں احتیاطی تدابیر پر عمل اور ماہ رمضان المبارک میں تراویح ، نمازوں کی ادائیگی کے لئے مساجد، امام بارگاہوں کے لئے 20نکاتی متفقہ اعلامیہ جاری کر دیا گیا ہے،کمشنر ہزارہ ڈویژن ریاض خان محسود کی زیر صدارت اجلاس میں ڈی آئی جی ہزارہ میر ویس نیاز ،ڈپٹی کمشنر ایبٹ آباد مغیث ثناءاللہ ، ڈپٹی کمشنر ہری پور ،مانسہرہ ڈی پی او ایبٹ آباد ظہور بابر آفریدی ، ڈی پی او مانسہرہ ،ہری پور ہزارہ کے تمام اضلاع کے جید علماء کرام،امن کمیٹی کے اراکین موجود تھے،اجلاس میں وفاقی حکومت اور صدر مملکت کا علماء سے مشاورت کی روشنی میں متفقہ اعلامیہ پیش کیا گیا ،جس میں علماء کرام نے کورونا احتیاطی تدابیر پر عمل کرنے کی یقین دہانی کرائی ہے ،ماہ مبارک میں جاری ہدایات کے مطابق مساجد اور امام بارگاہ میں نماز کی ادائیگی کے لئے قالین اور دریاں نہیں بچھائی جائیں گی،کچا فرش ہونے کی صورت میں چٹائی بچھائی جا سکتی ہے،نمازی گھر سے جائے نماز کا لا سکتے ہیں،اسی طرح نماز سے قبل مساجد میں مجمع لگانے پر پابندی ہوگی،جن مساجد میں صحن ہوں وہاں نماز کی ادائیگی صحن میں ہوگی،مساجد میں 50سال سے زاہد عمر کے افراد نابالغ بچےاورکھانسی ،نزلہ ،زکام وغیرہ کے مریض مساجد امام بارگاہوں میں نہ آئیں،سڑک اور فٹ پاتھ پر نماز کی ادائیگی سے اجتناب کرنا ہوگا، مساجد کو کلورین سے دھویا جائے،اسی کا چھڑکاؤ چٹائی پر بھی کیا جائے،صف بندی میں نمازیوں کے درمیان سماجی فاصلہ 6 فٹ تک ہوگا ،مساجد انتظامیہ احتیاطی تدابیر پر عمل ممکن بنائیں اور سماجی فاصلوں کے لئے نشانات لگائیں جائیں ،وضو بھی گھر سے کر کے آئیں 20سیکنڈ ہاتھ دھوئیں ،نمازیوں کے لئے ماسک کا استعمال ضروری ہے ،مساجد میں نہ بغلگیر ہوں، اور نہ مصافحہ کریں اپنے چہرے پر بھی ہاتھ نہ لگائیں گھر آکر ہاتھ دھو لیں،موجودہ صورتحال میں اعتکاف گھروں میں کیا جائے ،مساجد میں سحری اور افطار نہیں ہوگی،مساجد اور امام بارگاہوں کی انتظامیہ ،ائمہ اور خطیب ضلعی وصوبائی حکومتوں اور پولیس سے رابطہ اور تعاون رکھیں ،مساجد امام بارگاہوں کی انتظامیہ کو
ان احتیاطی تدابیر کے ساتھ مشروط اجازت دی گئی ہے، اگر ماہ مبارک کے دوران حکومت نے محسوس کیا کہ احتیاطی تدابیر پر عمل نہیں ہورہا ،متاثرین کی تعداد حطرناک حد تک بڑھنے پر حکومت دوسرے شعبوں کی طرح مساجد اور امام بارگاہوں کے بارے میں پالیسی پر نظر ثانی کرے گی،کمشنر ہزارہ ریاض خان محسود کا کہنا تھا علماء کرام کی تجاویز زیر غور رہیں گی ،انہوں نے کہا کہ ہزارہ کے علماء کرام ،انتظامیہ اور میڈیا سے مشاورت کا مقصد کورونا کی تیسری لہر سے بچاؤ کے لئے اقدامات اٹھانا ہے ،کمشنر ہزارہ کا کہنا تھا ہزارہ کے عوام کی ترجمانی کا حق ادا کر رہے ہیں،چونکہ ہزارہ پر امن خطہ ہے ہمیشہ حکومت کی پالیسوں کا ساتھ دیا جس سے بد امنی پھیلانے والوں کا موقعہ نہیں ملا ،انہوں نے کہا کہ کورونا ایک آفت ہے،حکومت کی ایس او پیز علماء سے مشاورت سے بنائی گئی ہیں ،انتظامیہ تمام امور میں سٹیک ہولڈر کو ساتھ لے کر چلے گی اور ایس پیز پر عمل کروائیں گے، انہوں نے کہا کہ ٹرانسپورٹ ،دفاتر،بازاروں سمیت تمام شعبوں کے لئے حکومت نے ایس او پیز بنائی ہوئی ہیں،اس میں صرف مساجد مدارس تک محدود رکھنا درست تاثر نہیں ہے،کمشنر ہزارہ کا کہنا تھا پاکستان کے اکثریت عوام غربت لکیر سے نیچے زندگی گزار رہے جس کی وجہ سے بازاروں میں کاروبار کی اجازت دی گئی ہے ورنہ کورونا سے زیادہ غربت سے لوگ مر جائیں،موجودہ صورتحال میں صوبہ میں 29فیصد کورونا بڑھ چکا ہے اگر احتیاطی تدابیر اختیار نہ کیں تو ہسپتالوں میں جگہ نہیں بچے گی ، انہوں نے تمام اضلاع کے ڈپٹی کمشنرز کو مساجد کی کمیٹیاں بنانے کی ہدایت کیں جس میں تمام شعبوں کو نمائندگی ملے گی ،انہوں نے کہا کہ ہزارہ میں کورونا وائرس تیزی سے پھیل رہا ہے،حکومت کی مشینری کو فعال کرکے اپنی زمہ داری پوری کریں گے،میڈیا بھی عوام کی آگاہی کے لئے اس پیغام کو گھر گھر پہنچائے،اس موقع پر ڈسٹرکٹ خطیب ایبٹ آباد مفتی عبدالواجد ، پیر سید کمال حسین شاہ ، مولانا عبدالحی،مولانا خورشید احمد،مولانا مجیب الرحمن ،مولانا قاضی وصی الرحمن ،مولانا حبیب الرحمن ضلعی مسئول وفاق المدارس العربیہ پاکستان ،مفتی جعفر طیار مقبول اعوان ،قاضی الفت حسین ،ہارون الرشید ،قاضی غلام مجتبی ،مولانا عبدالوحید ،مولانا سرفراز فاروقی، مولانا محمد بخش ہزاروی ،قاضی گل رحمن،
قاضی عبد العلیم ،مولانا الطاف الرحمن، اور میڈیا کی جانب سے صدر ایبٹ آباد پریس کلب سردار نوید عالم نے بھی اپنے خطاب میں مکمل تعاون کی یقین دہانی کرائی ، مقررین کا کہنا تھامساجد اور مدارس میں کورونا کی پہلی دوسری لہر کے دوران عمل کرکے دکھایا ہے، کیوں کہ ذندگی اورصحت قیمتی ہے ،اسلام نے بھی وباء کے دوران احتیاط پر زور دیا ہے،انہوں نے اپنے خطاب میں ہر ممکن تعاون کا یقین دلایا ہے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں