209

ہم کورونا جیسی آفت کا مقابلہ نہیں کرسکتے، استعفار کی ضرورت ہے: مشتاق غنی

سپیکر خیبر پختون خوا اسمبلی مشتاق احمد غنی نے کہا ہے کہ پاکستان کا قیام علامہ محمد اقبال کے خواب اور قائد اعظم محمد جناح کی جدوجہد سے حاصل تو ہوا، لیکن اس کے مقاصد پورے نہیں کئے گئے، چند خاندانوں کی اجارہ داری نے ملک کا نظام تباہ کیا ،ماضی کی حکومت کی لوٹ کھسوٹ پر موجودہ حکومت نے مشکل حالات کا مقابلہ کیا ،عمران خان نے حکومت سنبھالی تو معیشت ختم تھی اگر قرضہ نہ لیتے تو ملک دیوالیہ ہو جاتا، وزیر اعظم عمران خان کی پالیسوں سے معیشت مستحکم ہو ئی،آج غریبوں کے لئے گھر تعمیر ہو رہے ہیں،شیلٹر ہوم بنائے ،لنگر خانے قائم کئے تاکہ غریبوں کو دو وقت کاکھانا اور رہائش مل سکے ،حکومت کا احساس پروگرام ،صحت کارڈ بھی غریبوں کے لئے ہے،یہی وہ فلاحی ریاست ہے جس کا خواب علامہ اقبال نے دیکھا تھا، ان خیالات کا اظہار انہوں نے یہاں ایبٹ آباد پریس کلب میں انجمن اتحاد شہریاں کے زیر اہتمام یوم قرارداد پاکستان کی منعقدہ تقریب میں خطاب کرتے ہوئے تقریب میں صدر انجمن اتحاد شہر یاں ملک سجاد ،صدر ایبٹ آباد پریس کلب سردار نوید عالم نے بھی خطاب کیا جب کہ اس موقع پر،سابق کنزرویٹر سردار جاوید ،پی ٹی آئی کے رہنما سردار شجاع نبی ،تحریک صوبہ ہزارہ کے سلطان العارفین جدون ،آل ٹریڈرز فیڈریشن کے صدر سردار شاہنواز،جنرل سیکرٹری سجاد خان جدون ،ڈسٹرکٹ سپورٹس آفیسر وسیم فضل،سردار شیر دل سابق تحصیل کونسلر،یاسر تاتاری نائب صدر پی ٹی آئی ،وقاص مرزا کے علاوہ دیگر بھی شریک تھے ، سپیکر مشتاق احمد غنی کا کہنا تھا ملک لازوال قربانیوں کے بعد حاصل ہوا، سرسید احمد خان نے الگ وطن کی ضرورت محسوس کرتے ہوئے علی گڑھ یونیورسٹی کی بنیاد دو قومی نظریہ پر رکھی، جس سے بڑے بڑے رہنماؤں نے جنم لیا،قائد محمد علی جناح کے اردگرد وہی لوگ تھے جنہوں نے علی گڑھ یونیورسٹی سے تعلیم حاصل کی ، علامہ محمد اقبال نے بھی اسی بنیاد پر تصور پیش کیا تھا ،جس پر قائد محمد علی جناح نے کانگرس سے علیحدگی کرکے مسلم لیگ کی بنیاد رکھی،سپیکر صوبائی اسمبلی مشتاق احمد غنی کا کہنا تھا ہزارہ کے 99فیصد عوام نے ملک کے قیام کے لئے ریفرنڈم میں پاکستان کے حق میں ووٹ دیا تھا،انہوں نے کہا کہ 23مارچ کے دن کی بڑی اہمیت ہے ،جس میں مسلمانوں کو مکمل مذہبی آزادی کے لئے الگ وطن کا تصور پیش کیا گیا تھا،برصغیر پاک وہند کی تقسیم میں انگریز اور ہندو بنیا نے سازش کرتے ہوئے جونا گڑھ ،حیدر آباد سمیت دیگر علاقے مسلم اکثریتی علاقے ہندوستان میں شامل کئے،
سپیکر مشتاق احمد غنی کا کہنا تھا کورونا نے دنیا کی معیشت کو تباہ کر دیا ہے کورونا کی تیسری لہر ذیادہ خطرناک ہے،اس کو زرا بھی ہلکا نہ لیں اس سے بچاؤ کے لئے احتیاطی تدابیر کے علاوہ استغفار کریں کیوں کہ یہ آفت ہے اس کا مقابلہ ہم نہیں کر سکتے ،شہری تاجر اور تمام طبقے اس سے بچاؤ کے لئے حکومتی ہدایات پر عمل کریں۔تقریب کے اختتام پر قرداد پاکستان کا کیک بھی کاٹا گیا۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں